ایفل ٹاور کی اونچائی 6 میٹر بڑھ گئی

خدا کی بستی: خبر ایجنسی کے مطابق گزشتہ روز پیرس کے تاریخی ایفل ٹاور پر ایک نیا ڈیجیٹل ریڈیو اینٹینا لگایا گیا جس کے بعد ایفل ٹاور کی اونچائی 6 میٹر (19.69 فٹ) بڑھ گئی۔

ایفل ٹاور پر ڈیجیٹل ریڈیو اینٹینا ہیلی کاپٹر کے ذریعے لگایا گیا جس کے بعد اب ٹاور کی لمبائی 330 میٹر ہوگئی ہے۔

خیال رہے کہ دُنیا کا یہ مشہور ٹاور 19ویں صدی کے آخر میں گستاو ایفل نے تعمیر کروایا تھا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق، ایفل ٹاور واشنگٹن کے یادگار مونومینٹ کو پیچھے چھوڑ کر دنیا کا سب سے اونچا انسان ساختہ ڈھانچہ بنا تھا اور یہ اعزاز، اس کے پاس چار دہائیوں تک رہا۔

بعدازاں 1929ء میں نیویارک شہر میں قائم کرسلر بلڈنگ کے نام یہ اعزاز کردیا گیا تھا۔

اس کے علاوہ لوہے سے بنا ہوا ایفل ٹاور دنیا میں سب سے زیادہ دیکھے جانے والے سیاحتی مقامات میں سے ایک ہے۔

:پس منظر

ایفل ٹاور لوہے سے بنے ایک مینار کا نام ہے، جو فرانس کے شہر پیرس میں دریائے سین کے کنارے واقع ہے۔ 1889ءمیں ایفل ٹاور کی رونمائی انقلابِ فرانس کے ایک سو سالہ جشن کا حصہ تھا۔

اسے 100سالہ تقاریب کے موقع پر ہونے والی نمائش کے دروازے کے طور پر بنایا گیا تھا۔ اس مینار کو عالمی نمائش کے 20سال بعد منہدم کیا جانا تھالیکن بعد ازاں یہ ارادہ منسوخ کر دیا گیا۔

دل چسپ بات یہ ہے کہ جب ایفل ٹاور تعمیر کیا جا رہا تھا، اس وقت پیرس کے 300 مصوروں اور دانشوروں نے اس کی تعمیر کے خلاف حکومت سے احتجاج کیا تھا۔ انہوں نے مؤقف اختیار کیا کہ اس دیوہیکل ٹاور کی تعمیر غیر ضروری ہے۔

آج یہ ٹاور دنیا میں فرانس کی سب سے زیادہ پہچانی جانے والی یادگار ہے اور اس کا شمار دنیا کے مشہور ترین سیاحتی مقامات میں ہوتا ہے۔ اسے ہر 7سال بعد نیا پینٹ کیا جاتا ہے، جس کے لیے 60 ٹن پینٹ درکار ہوتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.