خلا میں آتشزدگی سے نمٹنے کے لیے نیا تجربہ

آگ انسانی ارتقاء کی تاریخ میں سب سے اہم دریافتوں میں سے ایک تھی۔ تاہم، جب اس پر قابو نہ پایا جائے تو وہی آگ سب سے زیادہ تباہ کن چیزوں میں سے ایک ہو سکتی ہے۔ آتشزدگی کو کنٹرول کرنے اور اسے خلا میں محفوظ طریقے سے استعمال کرنے کے لیے، ناسا بین الاقوامی خلائی اسٹیشن پر ایک تجربہ شروع کر رہا ہے جو خلا میں آگ کے اثرات کا مطالعہ کرے گا۔ناسا کا نیا تجربہ مریخ پر زیرو کششِ ثقل میں آگ کے محفوظ استعمال سے متعلق ہے۔ ناسا کے مطابق خلا میں آگ مختلف طریقے سے کام کرتی ہے، کشش ثقل اور ہوا کے بہاؤ میں ہونے والی تبدیلیاں اس کے پھیلنے کے طریقے کو تبدیل کر سکتی ہیں اور اسے بجھانا مشکل بنا سکتی ہیں۔ناسا کے انجینئرز کا کہنا ہے کہ مریخ پر آگ سے محفوظ گھر ڈیزائن کرنے کی ضرورت ہے۔چاند پر زنگ:امریکی سائنس دانوں نے چاند پر زنگ (rust) دریافت کیا تھا، جو اس کی قطبین پر زیادہ ہے اور دیگر مقامات پر کم مقدار میں موجود ہے۔ماہرین کے مطابق چاند پر یہ زنگ دراصل ’ہیماٹائٹ‘ نامی ایک معدن کی شکل میں ہے جو زمین پر لوہے کی قدرتی کچ دھات میں بکثرت پائی جاتی ہے۔ چاند کا وہ حصہ جو ہمیشہ زمین سے مخالف سمت میں رہتا ہے، اس پر زنگ موجود نہیں جبکہ صرف اسی حصے میں زنگ دریافت ہوا ہے جو اپنا رُخ زمین کی طرف رکھتا ہے۔چاند پر گھر: امریکی ادارے ناسا کی جانب سے چاند پر رہائش کا باقاعدہ مشن 2024 میں شروع کیا جائے گا۔ایک رپورٹ کے مطابق چاند کی سطح پر گھر بنانے میں تقریباً 40 ملین ڈالر لاگت آئے گی، اور چاند پر بنائے گئے گھر کا ماہانہ کرایہ 3 لاکھ 25 ہزار 67 ڈالر تک ہوگا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published.